ڈویژن کے حوالے سے اے این پی اور وزیراعلیٰ کے درمیان کوئی اختلاف نہیں انجینئر زمرک خان اچکزئی

کوئٹہ صوبائی وزیر زراعت انجینئر زمرک خان اچکزئی نے کہا ہے کہ مخلوط حکومت میں شامل جماعتوں کے درمیان اختلافات ہے اور نہ ہی جام حکومت کو کوئی خطرہ ہے شروع سے لےکر آج تک ہماری حکومت کےخلاف کچھ لوگ غلط فہمیاں اور پروپیگنڈے کررہے ہے جس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے اے این پی اور حکومت کے درمیان پشتون علاقوں میں دو ڈویژن اور اضلاع سے متعلق اختلافات نہےں تاہم کچھیٹےکنکل مسائل ہے ان کے حل کےلئے ہم کوشاں ہے ‘ےہ بات انہوں نے صحافیوں سے بات چےت کرتے ہوئے کہی‘ انجینئر زمرک خان اچکزئی نے کہاکہ بے روزگاری کے خاتمے کےلئے حکومت اقدامات کررہی ہے اور ایک سال کے دوران ہزاروں کی تعداد میں آسامیاں پیدا کرکے اخبارات میں مشتہر کی ہے جلد ان پر پوسٹوں پر میرٹ کے مطابق بھرتیاں عمل میں لائی جائےگی موجودہ حکومت عوام کو بے روزگار نہیں بلکہ روزگار دینگے سابقہ حکومت کی غلط پالےسیوں کی دولت جس نے نہ تو ترقی کے حوالے سے اقدامات کےے اور نہ ہی بے روزگاری پر توجہ دی ےہی وجہ ہے کہ آج بھی لوگ بے روزگاری کا شکار ہے انہوں نے کہا کہ وزیر اعلی بلوچستان جام کمال خان کی کارکردگی نے عوام کے دل جیت لیے ہیں وزیر اعلی بلوچستان جام کمال خان دن رات ایک کرکے بلوچستان کے ہر مسائل پر نوٹس لے رہے ہیں تاکے بلوچستان ترقیاتی یافتہ صوبہ بن کر دنیا میں پاکستان کا نام روشن کرے بلوچستان حکومت کی اولین ترجیح ہے کہ نوجوانوں کو روزگار کے مواقع دئیے جائے تاکہ بلوچستان سے بےروزگاری کا خاتمہ ہوسکے وزیر اعلی بلوچستان جام کمال خان کی مقبولیت سے لوگ بوکھلاہٹ کا شکار ہے انہوں نےایک سوال کے جواب میں کہاکہ پشتون علاقوں میں قلعہ عبداللہ اور ژوب ڈویژن کے حوالے سے اے این پی اور وزیراعلیٰ بلوچستان کے درمیان کوئی اختلاف نہیں دونوں ملکر اس پر کام کررہے ہیں تاکہ آنےوالی وقت میں ڈوےیژن کے ساتھ ڈسٹرکٹ کا بھی اضافہ ہوسکے لیکن کوئٹہ کے حوالے سے کچھ ٹےکنکل مسئلہ ہے جو پشن ‘چمن اور قلعہ عبداللہ سے الگ ہو کر صرف کوئٹہ رہ جاتا ہے اور ایک ضلع سے ڈوےیژن نہیں بن سکتا اس حوالے سے ہماری کوشش ہے کہ کوئٹہ میں ڈسٹرکٹ بنا کر ان کو بھی ڈوےیژن کیا جائے تاکہ ژوب اور چمن کےلئے راستہ ہموار ہو سکے ۔

Tags

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close
Close