The news is by your side.

کوئٹہ میں اب تک 20 لاکھ ر وپے کی کٹوتی غر حاضر اسٹاف کی تنخواہوں سے کی گئی ہے

0

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

- Advertisement -

کوئٹہ31دسمبر:۔ڈپٹی کمشنر کوئٹہ میجر اورنگزیب بادینی نے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسران کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوے گزشتہ ہونے والی میٹنگز اور ان پر اٹھائے جانے والے اقدامات کے حوالے سے جائزہ لیا۔ اجلاس مےںڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کوئٹہ عبدالحمید، ڈی او ای میل کوئٹہ محمد اکرم ، آر ٹی اےس اےم عزےزالرحمان، ڈی او ای فیمیل کوئٹہ فرزانہ احمدزئی،،کے علاوہ دیگر متعلقہ آفیسر ان بھی موجود تھے،اجلاس مےں تعلیمی اداروں میں شجر کاری کے حوالے سے تما م آفیسر ان کو ہدایت جاری کی کہ وہ جلد از جلد تمام اسکولوں کا ڈیٹا مرتب کر کے رپورٹ پےش کرےں کہ انہےں کتنے اورکس قسم کے پودے درکار ہیں تاکہ شجرکاری بروقت انجام پذیر ہو سکے۔اجلاس میں اساتذہ کی اٹیچمنٹس کے حوالے سے سے فیصلہ کیا گیا کہ اٹیچمنٹس کو فی الفور ختم کیا جائے اور تمام ڈسٹرکٹ میں جو خالی آسامیاں ہیں ان کو قانونی تقا ضوںکے تحت سیکرٹری فنانس سے مشاورت کے بعد جلد از جلد مکمل کی جائےںاس کے علاوہ رےکارڈ مرتب کیا جائے جس سے واضح ہو کہ کوئٹہ اور دوسرے ڈسٹرکٹ میں کتنی اٹیچمنٹس ہیں، تعلیمی اداروں میں ٹیچنگ اورنان ٹیچنگ اسٹاف کی کی کل کتنی تعداد ہے۔غیر حاضر اساتذہ اور نان ٹیچنگ اسٹاف کے خلاف کئے جانے والے اقدامات کے حوالے سے سے ڈپٹی کمشنر کوئٹہ کو بتایا گیا کہ کوئٹہ میں اب تک 20 لاکھ ر وپے کی کٹوتی غےر حاضر اسٹاف کی تنخواہوں سے کی گئی ہے اور32 غےر حاضر اسٹاف کوبرخاست کیا گیا اس پر ڈپٹی کمشنر کوئٹہ نے کہا کہ غیر حاضر اساتذہ اور اسٹاف کو کسی صورت بھی برداشت نہیں کیا جائے اور ان کی تنخواہوں میں سے سے کٹوتی کرنے میں کوئی کوتاہی نہ برتی جائے او رمسلسل غیر حاضر رہنے والے اساتذ ہ اور اسٹا ف کے بارے میں محکمہ تعلیم کو کو بروقت اطلاع دے کر ان کےخلاف سخت سے سخت ا قدامات کیے جائیں۔ غیر فعال اسکولوں سے متعلق ان کو آگاہ کیا گیا کہ 12 غیر فعال ا سکولوں کو فعال کر دیا گیا ہے اس پر ڈپٹی کمشنر کوئٹہ نے کہا کہ کہ جتنے بھی سرکاری ا سکول ہیں ان کی زمین کو محکمہ تعلیم کے نام ٹرانسفر کروانے کا کام جاری ہے اور بہت جلد مکمل کر لیا جائےگا۔انہوں نے کہا کہ تمام سرکاری ونجی ا سکولوں اور مدارس کا ڈیٹا مرتب کرکے رپورٹ پیش کی جائے انہوں نے تعلیمی بجٹ کے حوالے سے احکامات جاری کرتے ہوئے کہاکہ تعلیمی اداروں کے لیے جو بھی بجٹ مختص کیا جاتا ہے اس کی تقسیم اور استعمال کو کو شفاف بنایا جائے اور ایسی جامع پالیسی ترتیب دی جائے جو کہ اس بجٹ کے استعمال کے ہر پہلوکا جائزہ لے خوا ہ وہ اسکولوں کے فرنےچر کی خرےداری ہو ، اسکولوں کی مرمت کا کام ہو اسکولوں کی اسٹےشنری اور دےگر سامان کی خریداری ہو کوئی بھی کام بغیر ورک آرڈر کے شروع نہ کیا جائے آخر میں انہوں نے کہا کہ موسم سرما کی چھٹیاں میں تمام تعلیمی اداروں کے پرنسپل صاحبان کو تاکید کی جاتی ہے کہ وہ ان چھٹیوں مےںا سکولوںکے ریکارڈ اور اشیائ کی حفاظت کرنے کےلئے ٹھوس اقدامات کرےں انہوں نے کہا کہ کسی بھی معاشرے کی ترقی مےں تعلےم اےک اہم ستون کی حےثےت رکھتی ہے اور ہم سب کو اس مقدس پےشے کی پاسداری کرتے ہوئے اےسے احسن اقدامات کرنے ہونگے جس سے بہتر تعلےم کو فروغ ملے اور آنے والی نسلےں اس سے مستفےد ہوسکےں

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

You might also like