23ویں پاکستان ایران جوائنٹ بارڈر کمیشن کے افتتاحی اجلاس

0

کوئٹہ یکم جنوری :۔صوبائی وزیر داخلہ میر ضیاءاللہ لانگو نے پا کستان ایران جوائنٹ بارڈر کمیشن کے افتتاحی اجلاس میں کہا ہے کہ ایران ہمارا برادر ہمسایہ ملک ہے دونوں ممالک کے عوام کے درمیان گہرے رشتے ہیں ،سرحدی کمیشن کا اجلاس، دونوں ممالک کے درمیان سر حدکی خلاف ورزی انسانی سمگلنگ اور منشیات کی سمگلنگ کی روک تھام سمیت دراندازی کا مسئلہ جو انتہائی اہمیت کا حامل ہے کی روک تھام کیلئے مو¿ثر اقدامات دونوں ممالک کی جانب سے اٹھائے جانے کی اشد ضرورت ہے۔ جبکہ ایران کے ساتھ تجارتی و معاشی سرگرمیوں کو فروغ دینے کی بھی ضرورت ہے۔ دہشت گرد عناصر سرحد کی دونوں جانب امن و امان کے لیے خطرہ ہیں۔ پاکستان اور ایران کے درمیان مشترکہ اقتصادی مفادات کاا حصو ل اہم ترجیح ہے۔سرحدی علاقوں کے رہائشیوں اور کاروباری افراد کو سہولیات کی فراہمی کیلئے ہر ممکن تعاون کیلئے تیار ہیں ۔ دونوں ممالک کے درمیان ہوائی سفر سے معاشی سرگرمیوں کو فروغ ملے گا۔ان خیالات کا اظہارصوبائی وزیر داخلہ نے 23ویں پاکستان ایران جوائنٹ بارڈر کمیشن کے افتتاحی اجلاس کے موقع پر کیا۔اجلاس میں پاکستان ایران مشترکہ سرحدی کمیشن میں دونوں ممالک کے درمیان سرحدی معاملات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس میں دونوں ممالک کے وفود و سرحد پر تعینات سیکورٹی فورسز کے اعلی حکام نے شرکت کی۔سرحدی کمیشن کی افتتاحی نشست میں ایرانی وفد کی سربراہی محمد ہادی مرشی نے کی۔ پاکستان سے ملحقہ ایرانی صوبہ سیستان و بلوچستان کے ڈپٹی گورنر جنرل برائے سکیورٹی امور محمد ہادی مرشی 20 رکنی ایرانی وفد کی قیادت بھی کر رہے ہیں پاکستان کی جانب سے ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ حیدر علی شکوہ،ڈپٹی انسپکٹر جنرل فرنٹیئر کارپس ساو¿تھ برگیڈئیر ریحان عاقل خان ،کلکٹرکسٹم رضا دشتی ،ڈی آئی جی پولیس عبدالرزاق چیمہ و دیگر اعلیٰ آفیسران اجلاس میں شریک ہیں۔ اس موقع پرایرانی وفد کے سربراہ محمد ہادی مرشی نے کہا کہ پاکستان کا مثبت کردار ہمیشہ یادرہے گا۔ ایران پاکستان کے لیے نیک خواہشات اور جذبات رکھتا ہے خطے میں مسائل کے حل کیلئے مشترکہ لائحہ عمل اختیار کرنے پر یقین رکھتے ہیں قبل ازیں صوبائی وزیر داخلہ نے ایرانی وفدکو خوش آمدیدکہا۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.