آسامیوں پر  اپنے من پسند افراد کو نوازنے کی شدید الفاظ میں مزمت کرتے ہوئے کہا میر سکندر خان ملازئی

0

مستونگ۔/نیشنل پارٹی مستونگ کے سینئر رنماء و سابق ناظم میر سکندر خان ملازئی نے اپنے ایک  جاری کردہ بیان میں محکمہ تعلیم مستونگ کے نان ٹیکنیکل پوسٹوں پر سلیکشن کمیٹی کے چیرمین و ڈپٹی کمشنر مستونگ اور موجودہ کرپٹ و نا اہل  ڈی ای او مستونگ کی ملی بھگت سے ٹیسٹ و انٹریوز کے میرٹ لسٹ آوازاں کرنے سے پہلے راتوں رات سفارش و  اقربا پروری اور اپنے سیاسی آقاوں کی خوشنودی  کی خاطر سینکڑوں آسامیوں پر  اپنے من پسند افراد کو نوازنے کی شدید الفاظ میں مزمت کرتے ہوئے کہا کہ دونوں موصوف نے مل کر میرٹ کا گلہ گونٹ کر ٹیکنیکل پوسٹوں کے ساتھ ساتھ درجہ چہارم کی وہ پوسٹیں جو ریٹائرڈ یا فوت شدہ ملازمین کی  SON کوٹہ اور جن لوگوں نے تعلیمی اداروں کے لیے زمین دی ہے اور انکے ساتھ تحریری معاہدے  بھی کیے گئے تھے۔۔ان ظالموں نے انکو بھی نہیں بخشا ہے انکی بنیادی اور قانونی حق پر ڈاکہ ڈال کر انکو بھی محروم کر دیا ہے۔۔۔میر سکندر خان ملازئی نے کہا کہ کرپشن اقرباپروری اور میرٹ کی دھجیا اڑانے کی اس طرح کے نظیر مستونگ کی تاریخ میں نہیں ملتی۔۔انھوں نے کہا یہ عمل میرٹ اور شفافیت کی دعوے دار موجودہ سلکٹڈ اور کھٹپتلی حکومت کے لیے شرم کا مقام ہے۔۔انھوں نے کہا کہ آسامیوں کی سلکشن کمیٹی کے چیرمین اور ڈسٹرکٹ اور کرپٹ ایجوکیشن آفیسر کی جانب سے میرٹ کا گلہ گونٹنے سے سیکنڑوں پڑے لکھے اور حقدار نوجوانوں کو مایوس کرکے انکی حقوق پر جو غیر قانونی ڈاکہ ڈالا گیا ہے۔۔ نیشنل پارٹی اس مجرمانہ عمل پر کسی خاموشی اختیار نہیں کر ینگے۔۔۔انھوں نے کہا کہ نیشنل پارٹی کا روز اول سے یہی موقف رہا ہے کہ میرٹ کو ترجیح دے کر من پسند افراد کو سفارش اور اقرباء پروری جیسے غیر قانونی اقدامات کی حوصلہ شکنی کی جائے۔۔میر سکندر خان ملازئی نے کہا کہ چیف سیکریٹری بلوچستان اور سیکریٹری تعلیم سے مطالبہ کرتا ہوں  کہ محکمہ تعلیم مستونگ کی نان ٹیکنیکل آسامیوں کے موجودہ خفیہ میرٹ لسٹ  بندر بانٹ اور  من پسند تعیناتی آرڈرز کو فلفور کینسل کر کے ازسر نو میرٹ لسٹ ترتیب دے کر عوام کے سامنے لاکر تعیناتی آرڈرز جاری کیے جائے اور ملوث زمہ داروں کے خلاف اعلی سطحی تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دے کر زمہ داروں کے خلاف بلا تفریق کاروائی کی جائے۔۔بصورت دیگر نیشنل پارٹی ان غیرقانونی اقدامات کے لیے ہر فورم پر بھر پور آواز بلند کر کے انصاف کے حصول کے لیے عدالت عدلیہ کا بھی دروازہ کھٹکٹائنگے

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.