کرونا وائرس کے پھیلاؤ اور اس کے متاثرین میں تیزی سے اضافے پر تشویش کا اظہار

0

کوئٹہ 10جون: کرونا وائر س کی روک تھام وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے قائم بلوچستان کما نڈ اینڈ کنٹرول سینٹر سے جاری ایک پریس ریلیز میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ اور اس کے متاثرین میں تیزی سے اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے تمام متعلقہ اداروں خصوصاًصوبے کے تمام کمشنرز جوڈویژنل کمانڈ اینڈ آپریشنل سینٹرز کے انچارج بھی ہیں انہیں ہدایت کی گئی کہ صوبائی حکومت کی جانب سے جاری ایس او پیز SOPs پر سختی سے عملدر آمد کرایا جائے. اس ضمن میں وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان اور چیف سیکرٹری بلوچستان کیپٹن (ر) فضیل اصغر نے ایس او پیز SOPs پر سختی سے عملد رآمد کرانے کیلئے باقاعدہ احکامات جاری کر چکے ہیں. پی سی او سی PCOC کے انچارج و سیکرٹری کھیل عمران گچکی نے پریس ریلیز میں کہا ہے کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں اور ہمارے ماہرین جبکہ ملکی سطح اور بین الا قومی سطح پر ڈبلیو ایچ او WHO پہلے ہی وارننگ جاری کر چکے ہیں کہ کرونا کے پھیلاؤ میں جون کے آخر اور جولائی کے شروع میں بہت زیادہ اضافہ ہوگا اور یہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کا انتہائی پبلک کا وقت ہوگا اس لیئے عوام الناس سے اپیل کرتے ہوئے انہیں وارننگ جاری کی جا رہی ہیں کہ ہر شخص احتیاطی تدابیر پر سختی سے عملد رآمد کرے اور اپنے قریبی حلقوں کو بھی ایسا کرنے کیلئے وباء ڈالے پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ عالمی سطح پر محقیقن کی رائے کے مطابق ماسک کا استعمال اور میل جول میں کمی سے اس وائر س کے پھیلا ؤ کو روکا جاسکتا ہے نیوزی لینڈ جوکہ کرونا فری ریاست کے طور پر ہمارے سامنے ایک مثال ہے. انہوں نے احتیاطی تدابیر پر سختی سے عمل کرنے سے یہ کامیابی حاصل کی ہے پریس ریلیز میں ٹرانسپورٹرز و مسافر کو بھی متنبہ کیا گیا ہے کہ وہ صوبائی حکومت کے ٹر انسپورٹ کیلئے جاری ایس اوپیز پر سختی سے عمل کریں بصورت دیگر ان کے خلاف سخت قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے گی. لاک ڈاؤن میں نرمی و کاروباری سرگرمیوں کی اجازات کیلئے جو ایس او پیز SOPS لاگو کئے گئے ہیں اُن پر بھی سختی سے عملدر آمد کیا جائے. اور افسو سناک ہے کہ لاک ڈاؤن میں کمی کے بعد صوبے میں کرونا وائرس کے مریضوں میں روزانہ کی بنیاد پر تیز ی سے اضافہ ہوا ہے اور اب روزانہ دو سو 200 سے زائد کیسز مثبت آ رہے ہیں اموات میں بھی اضافہ ہو رہے ہیں جبکہ مقامی سطح پر وائرس کی منتقلی سو فیصد کے قریب پہنچ چکی ہے. جو ہمارے بے احتیاطی کی نشا ندہی کر رہے ہیں عوام اسے سنجید گی سے لیتے ہوئے خود اور اپنے خاندان والوں دوستوں واپنے حلقہ احباب کواس پر سختی سے عملد رآمد کرائیں.

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.